صدقۂ فطر کی اجتماعی تقسیم – ڈاکٹر محمد رضی الاسلام ندوی

by adbimiras
0 comment

 

سوال:
صدقہ فطر بہت سے لوگ انفرادی طور پر ادا کرتے ہیں ، جب کہ بعض لوگ کسی دینی تنظیم ، جمعیت یا ادارے کو دے دیتے ہیں ۔ صدقۂ فطر کے بارے میں حکم دیا گیا ہے کہ اسے عید الفطر کی نماز سے قبل ادا کردینا چاہیے ۔ اگر کوئی شخص اپنا صدقۂ فطر عید الفطر سے قبل کسی دینی تنظیم کو دے دے ، لیکن وہ تنظیم عید سے قبل اسے کسی غریب تک نہ پہنچاسکے تو کیا اس شخص کا صدقہ فطر ادا مانا جائے گا؟
یہ بھی واضح فرمادیں کہ اگر کسی وجہ سے کوئی شخص عید سے قبل صدقۂ فطر نہ ادا کرسکے تو کیا بعد میں اسے ادا کرسکتا ہے؟ یا اب اس کی قضا کی کوئی صورت نہیں ۔

جواب:
رمضان المبارک کے آخری ایام کا ایک اہم عمل یہ ہے کہ گھر کے تمام افراد کی طرف سے صدقۂ فطر نکالا جائے _ حضرت عبداللہ بن عمرؓ بیان کرتے ہیں:
فرض رسولُ اللهِ صلّى اللهُ عليهِ وسلمَ زكاةَ الفطرِ (بخاری :1503، مسلم: 984)
(رسول اللہ ﷺ نے صدقہ فطر ادا کرنے کا تاکیدی حکم دیا ہے _)

حضرت ابن عمرؓ سے ایک دوسری روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے عید الفطر کی نماز کے لیے نکلنے سے قبل تک صدقۂ فطر نکالنے کا حکم دیا ہے (مسلم:986) (یہ بھی پڑھیں عورت :کتنی ٹیڑھی؟ – ڈاکٹر محمد رضی الاسلام ندوی )

صدقۂ فطر انفرادی طور پر ادا کیا جاسکتا ہے اور اس کے اجتماعی جمع وتقسیم کا نظم بھی کیا جاسکتا ہے کہ لوگ اپنا اپنا صدقۂ فطر کسی دینی تنظیم یا رفاہی ادارے میں جمع کرادیں اور وہ اسے غریبوں اور مستحقین میں تقسیم کردے ۔ بعض احادیث سے معلوم ہوتا ہے کہ عہدِ نبوی میں اس کا اجتماعی نظم بھی قائم تھا ۔ حضرت ابوہریرۃؓ ایک موقع کا واقعہ بیان کرتے ہیں:
وَكَّلَنِي رَسولُ اللَّهِ بحِفْظِ زَكاةِ رَمَضانَ (بخاري :2311)
(رسول اللہ ﷺ نے مجھے رمضان میں (مسجدِ نبوی میں جمع ہونے والے) صدقۃ فطر کی نگرانی کی ذمے داری دی _)

حضرت نافعؒ نے بیان کیا کہ حضرت عبداللہ بن عمرؓ عید الفطر سے دو تین دن قبل صدقۂ فطر اس شخص کے پاس بھیج دیتے تھے جو اسے جمع کرتا تھا _ (موطا امام مالک)

صدقۂ فطر کی تقسیم چاہے انفرادی طور پر کی جائے یا اجتماعی طور پر ، کوشش کرنی چاہیے کہ وہ عید الفطر سے قبل غریبوں تک پہنچ جائے ۔ جو اجتماعی ادارے اسے جمع و تقسیم کرنے کا نظم کرتے ہیں انھیں بھی اس کا اہتمام کرنا چاہیے ، لیکن اگر کچھ تقسیم ہونے سے رہ جائے تو اسے بعد میں تقسیم کیا جاسکتا ہے ۔ اس معاملے میں اجتماعی ادارے غریبوں کے نمائندہ ہیں ۔ افراد کی طرف سے ان تک صدقۂ فطر پہنچ جانے کا مطلب یہ ہے کہ افراد کا صدقۂ فطر ادا ہوگیا ۔ بعض روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ صحابۂ کرام اللہ کے رسول ﷺ کی ہدایت کے مطابق اپنا صدقۂ فطر عید کی نماز کے لیے نکلنے سے قبل جمع کردیتے تھے اور آپ ﷺ نماز سے واپسی کے بعد اسے تقسیم فرماتے تھے ۔ حضرت عائشہ ، حضرت ابن عمر اور حضرت ابوسعید خدری رضی اللہ عنہم سے مروی ہے :
يأمُرُ بإخراجِها قبل أن يَغدُوَ إلى المصلى ، وكان يَقسِمُها إذا رَجَع ( المحلى :120/6)
(آپ ﷺ عید گاہ کے لیے نکلنے سے قبل صدقۂ فطر نکالنے کا حکم دیتے تھے اور وہاں سے واپس آنے کے بعد اسے تقسیم کرتے تھے _) (یہ بھی پڑھیں کیا خواتین کی عقل کم ہوتی ہے اور دین بھی؟ – ڈاکٹر محمد رضی الاسلام ندوی )

اگر کوئی شخص نمازِ عید الفطر سے قبل صدقۂ فطر نہ نکال سکے تو اس کا حکم ساقط نہیں ہوجاتا _ اسے بعد میں نکال دینا چاہیے ۔ اگرچہ بعد میں نکالنے کی صورت میں اس کا اجر کم ہوجائے گا ۔ حضرت عبداللہ بن عباسؓ سے مروی ہے:
مَنْ أدّاها قَبْلَ الصلاة فَهِيَ زكاةٌ مقبولَةٌ، وَمَنْ أدّاها بَعْدَ الصلاةِ فهِيَ صدَقَةٌ مِنَ الصدَقاتِ (ابوداؤد :1609، ابن ماجہ:1827)
(جس شخص نے نماز عید سے قبل صدقۂ فطر ادا کردیا اس کا صدقہ بارگاہِ الٰہی میں مقبول ہوگا اور جو نماز کے بعد ادا کرے اس کے صدقے کی حیثیت عام صدقات کی طرح ہوگی ۔)

[ شائع شدہ : ماہ نامہ زندگی نو نئی دہلی، ماہ جون 2021)

You may also like

Leave a Comment