بلقیس /نزار قبانی –  ترجُمہ : نودان ناصر

by adbimiras
0 comment

بلقیس۔

۔ اے شہزادی!

جلتی ہوئی ،

قبائلی جنگوں میں گھری

اپنی ملکہ کی رخصتی پہ

میں کیا لکھوں؟

بیشک،لفظ مُجھے الجھائے جاتے ہیں ۔۔۔

زخمیوں کے ایسے یہاں انبار دیکھوں

ٹوٹے ہوئے تاروں کے جیسے جسم

ٹوٹے ہوئے شیشے کے ٹکڑوں کے جیسے جسم

یہاں میں پوچھتا ہوں، اے مری محبوبہ: ک

یا یہ تمھاری تُربت ہے ؟

یا عرب قوم پرستی دفن ہے ؟

مابعد امروز میں تاریخ نہیں پڑھوں گا،

میری انُگلیاں جل چکی ،

میری پوشاک

لہو سے لبریز ہے

یہاں سے ہم پتھر کے دور میں

داخل ہوئے جاتے ہیں

یہاں سے ہم

ہر گُزرتے دن کے ساتھ

ہزار سال پیچھے کو لوٹ رہے ہیں

اس دور میں شاعری کیا کہہ پاتی ہے ، بلقیس ؟

بزدلی کے اس دور میں شاعری کیا کہہ سکتی ہے؟

عرب دُنیا تباہ و گُمنام ہوچکی

اوراسکی زبان بھی کٹ گئی

ہم سب مُجسمِ جرم ہے

. بلقیس۔۔۔

مجھے تُمھاری معافی چاہئے

شاید تمھاری زندگی

مری خطاوں ہی کا جُرمانہ تھا،

مُجھے یہ خوب خبر ہے

تمھیں موت سے ملوانے والوں میں

وہی ملوث ہیں

وہی

جو مرے لفظوں کو قتل کرنا چاہتے تھے !

خدا کی رحمت میں رہو ، دلکش حسینہ ،

شاعری ، بعد تمھارے ، ناممکن ہے۔۔

شاعر : نزار قبانی

ترجُمہ : نودان ناصر – – –

نزار قبانی شامی ، ڈپلومیٹ ، شاعر اور ادیب گُزرے ہیں جو اپنی قومی ، رومانوی اور فیمینسٹ شاعری کے لئے مشہور تھے بلقیس ان کی محبوبہ و بعد ازاں شریکِ حیات بنیں جو کہ بعد ازاں عراقی ایمبیسی میں بم دھماکے میں ہلاک ہوئیں۔ بلقیس کی موت نے نزار قبانی کی شخصیت و فن پر گہرا اثر مُرتب کیا جس کا اظہار انھوں نے اس نظم میں وارفتگی سے کیا۔۔

English Poem

 Balqees. . . oh princess,

 You burn, caught between tribal wars,

 What will I write about the departure of my queen?

 Indeed, words are my scandal. . . .

 Here we look through piles of victims

 For a star that fell, for a body strewn like fragments of a mirror.

 Here we ask, oh my love:

Was this your grave

Or the grave of Arab nationalism?

I won’t read history after today,

 My fingers are burned, my clothes bedecked with blood,

 Here we are entering the stone age. . . .

 Each day we regress a thousand years.

 What does poetry say in this era, Balqees?

 What does poetry say in the cowardly era. .

. ? The Arab world is crushed, repressed, its tongue cut. . . .

 We are crime personified. . . .

 Balqees . . .

 I beg your forgiveness.

Perhaps your life was the ransom of my own,

 Indeed I know well

That the purpose of those who were entangled in murder was to kill my words!

Rest in God’s care,

oh beautiful one, Poetry, after you, is impossible. . .

. Poet : Nizar Qabbani

Translation : Nodan Nasir

 Photo : Nizar Qabbani & Balqees

You may also like

Leave a Comment